Pages

جماعة الدعوة والتبليغ جواباً على سؤال أبو الحسن علي الحسني الندوي

سالة للشيخ / أبو الحسن علي الحسني الندوي - رحمه الله _ 
جواباً على سؤال عن أهل(  الدعوة والتبليغ )

بسم الله الرحمن الرحيم
الحمد لله رب العالمين ,والصلاة والسلام على سيد المرسلين محمد وآله وصحبه أجمعين .
أما بعد :

        إن جماعة (الدعوة والتبليغ ) التي أنشأها العلامة الداعية الجليل الشيخ/ محمد الياس الكاندهلوي في الأربعينات من هذا القرن العشرين ، والتي عرفت في العالم كله بنشاطاتها الدعوية والإصلاحية العظيمة ، واعترفت الأوساط العلمية في شبه القارة الهندية بإخلاصها وتفانيها واستقامتها على الجادة وجهودها الجبارة المحيّرة للعقول والمغيّرة للمجتمعات من حياة الغفلة والفسق والمعاصي إلى حياة التذكر والصلاح والتقوى ، ولم يُحرم أي بلد لا في العالم الإسلامي ولا في البلدان الأوربية وبلدان القارات في العالم من وفودها الدعوية وإرسالياتها المبشرة بالدين الحنيف.

إن هذه الجماعة الإسلامية الصالحة هي – من دون شك – من أكبر الجماعات بل كبرى الجماعات الإسلامية على الإطلاق في العالم : أثرت على حيات مئات الآلاف من الناس ، فأصبح عبّاد الدنيا العاكفون على الملذات والشهوات ، والغارقون في حَمْأة المعاصي والإنتهاك للحرمات والاستهتار ، من عباد الله المخلصين والمسلمين الأبرار المتقين .
        إن هذا التغيّر قلما شهدته المجتمعات ، وقد كان هذا التأثير لكبار المجددين والمصلحين في التاريخ من أمثال الحسن البصري إلى الشيخ عبد القادر الجيلاني إلى الدعاة  الأجِلّة في مختلف البلدان  الإسلامية ، وعلى سبيل المثال الإمام ولي الله الدهلولي , أحمد بن عرفان الشهيد وأصحابه وخلفائه الذين تركوا في الهند أمثلة رائعة من مآثر التجديد والإصلاح العظيمة، فأصلحوا العقائد وقاوموا الشرك والبدع والتقاليد الهندوسية والطقوس الشركية , وجميع  أنواع المحدثات حتى كانت حركتهم أكبر وأقوى وأنشط حركة في سبيل إرساء دعائم التوحيد في شبه القارة الهندية , والقضاء على كل أنواع الشرك والبدع والضلالات وإظهار شعائر الدين , وإقامة الشريعة الإسلامية الغراء , ورفع راية الجهاد ضد قوى الباطل والطاغوت حتى سماهم  الإنجليز المستهترون: بالوهابية، وأثاروا الضجة ضدهم وملأوا بهم الزنزانات والسجون.
لقد كان  العلامة الداعية الجليل  الشيخ / محمد الياس الكاندهلوى خليفة هؤلاء العظماء الأبطال من المصلحين والمجددين ، الذي قام أيام كانت الهند تموج بالاضطرابات الطائفية التي كان يثيرها الإنكليز المستعمرون، وكان مثلث المسيحية والهندوسية والمادية يسيطر على الهند ويأخذ بخناق المسلمين ويذيب شخصيتهم ويفقدهم دينهم وعقيدتهم وثقافتهم .
قام  العلامة الداعية الجليل الشيخ / محمد الياس في ضمن من قام من العلماء الأجِلّة المثابرين المناضلين بحركته الإصلاحية التي أسسها على العقيدة السلفية الصريحة الثابتة بالكتاب والسنة وما عليه سلف هذه الأمة من دون  مواربة ولا مجاملة ولا خوف من الحكام المشغبين المثيرين للفتن ، ولا من المبتدعة البريلويين الذين كانوا فتنوا الناس بالإشراك وعبادة الأضرحة والقبور والبدع والخرافات وضلالات الفرق الباطلة، ولا من الساكتين المُسالمين للانحرافات ، قام بهمة عالية تنوء بالأقوياء الشجعان ، ولم ينتظر مجىء الناس إليه بل خرج إليهم بإخلاص وإيمان واحتساب وحرقة في القلب ولوعة في النفس يذكرهم بمعاني التوحيد الحقيقية والرسالة ... 
بعقيدة التوحيد التي غشيها ضباب الشرك والوثنية الهندية، 
ويذكرهم بالعبادة وعلى رأسها الصلاة : التي تنهى عن الفحشاء والمنكر ،
وبالذكر لله تعالى الذي يطمئن القلوب ويشرح النفوس ويثبت الأقدام، 
وبالعلم النبوي الشريف الذي يبقى الإنسان بدونه ميتاً وإن كان يدعى حياً ،
وبالإخلاص في العقيدة والقول والعمل ,
ويذكرهم بأخلاق المؤمنين بتراحمهم وتعاطفهم وتوادهم، وأن يعودوا إلى اجتماعيتهم ، ثم بأن يتحركوا وينفروا وينشطوا في سبيل الله ، دعاة مبشرين ومنذرين ، يخلفون الأنبياء في أعمالهم ومهامهم فقد قال (بعثتم مُيَسّرين ولم تبعثوا مُعسّرين ).

        لقد قامت هذه الدعوة في هذا الجو وبهذه الدفعة الإيمانية والشرارة الإسلامية، وأنا عشتها وصحبتها ، وأنا أشهد بالله أن هذه الجماعة رغم ما يوجد في كل فرد وفي كل جماعة من مآخذ أو بعض مواطن الضعف – أصلح الجماعات الإسلامية عقيدة وعملاً وسلوكاً، وأقواها تأثيراً وأكثرها إخلاصاً وتفانياً في العمل.
        إن هذه الجماعة قامت على يد العلامة الداعية الجليل الشيخ / محمد إلياس الذي كان من جماعة الإمام / أحمد بن عرفان الشهيد والشيخ / إسماعيل الشهيد وعلى مذهبها في التمسك بالتوحيد الخالص والسنة الصحيحة الصريحة .
        لقد عُرِفَ الشيخ الإمام/  إسماعيل الشهد – عدا جهوده الدعوية وجهاده –بكتابه العديم النظير باسم " تقوية الإيمان " الذي ترجمته مع تعليقات باسم "رسالة التوحيد " وقد طبع ونشر مراراً ، لقد كان لهذا الكتاب من التأثير البالغ القوي والنفوذ العجيب ما أطار نوم المبتدعة والخرافيين، فأثاروا فتنة تِلْوَ فتنة ضد هذا الكتاب ، الذي ضرب على الوتر الحساس وتناول جميع أنواع الشرك الجليّ والخفيّ ، وأنواع البدع الدولية والمحلية بالرد والتفنيد والدحض بالحجج القرآنية الساطعة والأدلة الحديثية الباهرة ، بحيث قطع دابر المبتدعة الضالين ، وغني عن القول أن هذا الكتاب على غرار كتاب الشيخ / محمد بن عبد الوهاب المعروف بكتاب "التوحيد " بل أقوى منه ردّاً وإفحاماً وقطعاً لحجج الخرافيين .
        ومن هنا فإن جماعةالدعوة و التبليغ  معروفة في طول الهند وعرضها وفي بنجلاديش وباكستان بأنها جماعة وهابية تدعو إلى منابذة التقاليد الشركية ومحاربة القبوريين، وإن أشد الناس عداوة لجماعة الدعوة والتبليغ هم الطائفة البريلوية المبتدعة الخرافية التي تنتمي إلى الشيخ أحمد رضا خان التي تناصبها العداء ، وتتهمها بالعمالة للحركة الوهابية، وتحارب كتاب ( تقوية الإيمان ) للإمام /  إسماعيل الشهيد ،ولا تدع هذه الجماعة تدخل في مناطقها ومساجدها، وقد تشعل حرباً وتتعدى ضرباً لأصحابها، شأنهم في هذا الشأن الجاهليين الذين كانوا يقولون :
(لا تسمعوا لهذا القرآن والغوا فيه لعلكم تغلبون) 
ولكن يشهد الله أن كل هذه المحاولات والاتهامات والمناوشات لا تزيد الجماعة إلا صبراً واستقامة ،فيجازيهم الله تعالى بقلب الأحوال وتغيير النفوس والقلوب ،
فكم من مبتدعة عادوا إلى حظيرة السنة ؟
وكم من واقعين في الشرك عادوا إلى التوحيد الخالص ؟
وكم من ضُّلال اهتدوا إلى الحق ؟

يشهد بذلك ويراه رأي العين كل من يجول هذه المناطق والقرى والأحياء وإن كان هناك من مآخذ على بعض المنتمين إلى الجماعة فذلك يرجع إلى تقصيرهم وقلة استيعابهم وفهمهم للأسس والأهداف والمناهج والله على ما أقول شهيد 
وصلى الله على النبي وسلم .
والسلام عليكم ورحمة الله وبركاته

أبو الحسن علي الحسني الندوي .

ذکر فضائل ذکر zikr o fazaile e zikr


بســــــم اللہ الرحـمـن الرحـــیم

ــــــــــــــ ذکر کا مقصد ـــــــــــــ


  ذكر كا مقصد ہے کہ اللہ تبارک و تعالٰی کی ذات کا دھیان نصیب ہوجائے حال کا امر معلوم کرکے اللہ کے دھیان کے ساتھ اپنے آپ کو اس عمل میں لگا دینا یہ ذکر ہے قرآن مجید میں ہے کہ اللہ تعالٰی کو کثرت سے یاد کرو تاکہ تم کامیابی پاسکو دوسری جگہ ہے کہ اللہ کا ذکر کثرت سے کرو اور صبح شام اس کی تسبیح کرو اللہ تعالٰی کے ذكر کے فضائل قرآن و حدیث میں بےشمار بیان ہوئے ہیں
 
ــــــــــــــــ فضائل ذکر ـــــــــــــــ
۱ فرمایا کہ جنت کے آٹھ دروازے ہیں اس میں سے ایک ذکر کرنے والوں کے لئے ذاکرین اس میں سے مسکراتے ہوئے داخل ہوں گے

۲حضور اکرمﷺ کا ارشاد ہے کہ جو شخص اللہ کا ذکر کرتا ہے اور جو نہیں کرتا ان دونوں کی مثال زندہ اور مردہ کی سی ہے ذکر کرنے والا زندہ ہے اور ذکر نہ کرنے والا مردہ ہے
۳ذکر اللہ کی طرف رجوع پیدا کرتا ہے جس سے رفتہ رفتہ یہ نوبت آجاتی ہے کہ ہر چیز میں حق تعالٰی شانہ اس کی جائے پناہ اور ماوی' وملجابن جاتے ہیں

اللہ کا ذکر شیطان کو دفع کرتا ہے 
اللہ کی خوشنودی اور قرب کا سبب ہے 
بدن کو اور دل کو قوت بخشتا ہے 
چہرہ اور دل کو منور کرتا ہے 
اللہ کی مغفرت کا دروازہ کھولتا ہے 
دلوں کو زنگ سے صاف کرتا ہے 
لغزشوں اور خطاؤں کو دور کرتا ہے 
سکینہ اور رحمت کے اترنے کا سبب ہے 
ذکر کی مجلسیں فرشتوں کی مجلسیں ہیں 
یہ ایک درخت ہے جس پر معارف کے پھل لگتے ہیں 
ذکر شکر کی اور اللہ سے دوستی کی جڑ ہے 
ذکر سے جنت میں گھر اور محلات تعمیر ہوتے ہیں


۴👈نبی اکرمﷺ کے ارشاد کا مفہوم ہے کہ بہت سے لوگ ایسے ہیں کہ دنیا میں نرم نرم بستروں پر اللہ کا ذکر کرتے ہیں جس کی وجہ سے حق تعالیٰ جنت کے اعلیٰ درجوں میں ان کو پہچان دیتا ہے

۵👈حدیث کا مفہوم ہے کہ ایک شخص کے پاس بہت سے روپے ہوں اور وہ ان کو تقسیم کررہا ہو دوسرا شخص اللہ کے ذکر میں مشغول ہو تو ذکر کرنے والا افضل ہے

۶👈نبی اکرمﷺ کا ارشاد ہے کہ اللہ کے ذکر سے بڑھ کر کسی آدمی کا کوئی عمل عزاب قبر سے نجات دینے والا نہیں ہے

۷👈حضور نبی کریمﷺ نے فرمایا کہ جب جنت کے باغوں سے گزرو تو خوب کھاؤ کسی نے عرض کیا یا رسول اللہ ﷺ جنت کے باغ کیا ہے ارشاد فرمایا کہ ذکر کے حلقے

۸👈حضور اکرمﷺ کے ارشاد کا مفہوم ہے کہ جو لوگ اللہ کے ذکر کے لئے جمع ہوں اور ان کا مقصود صرف اللہ ہی کی رضا ہو تو آسمان سے ایک فرشتہ ندا کرتا ہے کہ تم لوگ بخش دئیے گئے اور اور تمہاری برائیاں نیکیوں سے بدل دی گئیں 
لہزا ہمیں چاہئے کہ ہم ہر وقت اللہ تعالٰی کا ذکر کریں تاکہ اللہ کی  ذات دھیان نصیب ہو خصوصاً صبح شام اور دوپہر کی پابندی کریں کم از کم تین مندرجہ ذیل تسبیح صبح شام اہتمام سے کریں 
۱ تیسرا کلمہ ۲ درود شریف ۳ استغفار ان تینوں اذکار کی بہت فضیلت آئی

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
ــــــــــــــــ (۱)تیسراکلمہ ـــــــــــ

اسلام کے معزز کرام اور ہمارے گروپ کے چمکتے ستارے
آپﷺ کے ایک قول کے مفہوم کے مطابق سبحان اللہ کا ثواب احد پہاڑ سے زیادہ لاالہ الا اللہ کا ثواب احد پہاڑ سے زیادہ ہے الحمدللہ کا ثواب احد سے زیادہ ہے اللہ اکبر کا ثواب احد سے زیادہ ہے
 
ایک دفعہ حضورﷺ نے حضرت ام ہانی رضی اللہ عنہا سے فرمایا کہ سبحان اللہ سو مرتبہ پڑھا کرو اس کا ثواب ایسا ہے گویا تم نے سو غلام عرب آزاد کئے الحمدللہ سو مرتبہ پڑھا کرو اس کا ثواب ایسا ہے گویا تم نے سو گھوڑے مع سامان لگا وغیرہ جہاد میں سواری کے لئے دے دیئے اور اللہ اکبر سو مرتبہ پڑھا کرو یہ ایسا ہے گویا تم نے سو اونٹ قربانی ذبح کئے اور وہ قبول ہوگئے اور لا الہ الا اللہ سو مرتبہ پڑھا کرو اس کا ثواب تمام آسمان زمین کے درمیان خلا کو بھر دیتا ہے اس سے بڑھ کر کسی کا کوئی عمل نہیں جو مقبول ہو

ایسے ہی لاحول ولا قوة إلا باللہ کی بہت فضیلت ہے یہ جنت کے خزانوں میں سے ایک خزانہ ہے جنت کے دروازوں میں سے ایک دروازہ ہے جنت کا ایک پودا ہے اور یہ کلمہ ننانوے بیماریوں کی دوا ہے اسی طرح سبحان اللہ وبحمدہ سبحان اللہ العظیم اللہ کے محبوب کلمہ ہیں زبان پر ہلکے ترازوں میں وزنی اور رحمن کو بہت محبوب ہیں سو مرتبہ پڑھنے پر ایک لاکھ چوبیس ہزار نیکیاں لکھی جاتی ہیں


ـــــــــــــ( ۲)درود شریف ـــــــــــــ
حضور پر نور سرور کائنات فخر موجودات کے احسانات کو سامنے رکھ کر کثرت سے درود پڑھا جائے کم از کم سو مرتبہ صبح شام جو شخص ایک دفعہ درود پڑھتا ہے اللہ اس پر دس دفعہ رحمتیں بھیجتے ہیں
(۱)دس خطائیں معاف کرتے
ہیں

(۲)دس درجے بلند کرتے ہیں
حضور اقدس ﷺ کا ارشاد ہے کہ بلاشک قیامت میں لوگوں ميں سے سب سے زیادہ مجھ سے قریب وہ شخص ہوگا جو سب سے زیادہ مجھ پر درود بھیجے گا حضور اکرمﷺ کا ارشاد نقل کیا ہے کہ جو شخص صبح وشام مجھ پر دس دس مرتبہ درود شریف پڑھے اس کو قیامت کے دن میری شفاعت پہنچ کر رہے گی 
حضور اکرمﷺ کے ارشاد کا مفہوم ہے کہ مجھ پر درود شریف پڑھنا پل صراط پر گزرنے کے نور ہے اور جو شخص جمعہ کے دن ۸۰ دفعہ  مجھ پر درود بھیجے اس کے اسی ۸۰ سال کے گناہ معاف کردئے جائیں گے


ــــــــــــــــ(۳)استغفار ــــــــــــ
انسان اپنے گناہوں کو سامنے رکھ کر خوب دھیان کے ساتھ اللہ سے توبہ اور معافی مانگے خود اللہ پاک اپنے قرآن مجید میں ارشاد فرماتے ہیں کہ اے مومنو اللہ کے آگے خوب سچی پکی توبہ کرو 
رسول اللہﷺ نے فرمایا تم زیادہ سے زيادہ اللہ کے سامنے استغفار کیا کرو اس لئے کہ میں خود دن میں سو مرتبہ استغفار کرتا ہوں 
رسول اللہﷺ نے فرمایا قسم ہے اس قادر مطلق کی جس کے قبضہ میں میری جان ہے اگر تم اتنی خطائیں بھی کرو کہ ان خطاؤں سے زمین وآسمان بھر جائیں اور پھر بھی تم اللہ سے مغفرت طلب کرلو تو اللہ پاک ضرور تمہاری خطاؤں کو بخش دے گا اور قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں محمدﷺ کی جان ہے کہ اگر بالفرض تم بالکل خطائیں نہ کرو تو اللہ تعالیٰ ایسی قوم کو پیدا کرے گا جو خطائیں کریں اور پھر اس سے مغفرت طلب کریں تو وہ ان کے گناہ معاف کردے 
ایک حدیث کا مفہوم ہے کہ جو شخص چاہے کہ قیامت کے دن اس کا نامہ اعمال اس خوش کردے تو اس کو کثرت سے توبہ واستغفار کرتے رہنا چاہئے
ان تسبیحات کے ساتھ دن رات کی صبح وشام کی مسنون دعاؤں کا اہتمام کیا جائے اور قرآن مجید وفرقان حمید کی باقاعدگی سے تلاوت کی جائے رسول اللہﷺ نے فرمایا کہ کہ قرآن پڑھا کرو اس لئے کہ یہ قرآن قیامت کے دن اپنے پڑھنے والوں کی شفاعت کرنے کے لئے آئے گا اللہ کے کلام کو تمام کاموں پر ایسی ہی فضیلت اور فوقیت حاصل ہے جیسی خود اللہ تعالٰی کو اپنی تمام مخلوق پر جس شخص نے کتاب اللہ کا ایک حرف پڑھا اس کے لئے ایک نیکی ہے اور ہر نیکی کا ثواب کم از کم دس گنا ہوتا ہے قابل رشک دوہی شخص ہیں ایک وہ شخص جس کو اللہ نے قرآن کریم کی دولت عطا فرمائی اور وہ شب روز اس پر عمل کرتاہے دوسرا وہ جس کو اللہ نے مال دولت سے نوازا اور وہ شبِ روز اس مال کو خرچ کرتا رہتا ہے 
قیامت کے دن قرآن شریف پڑھنے والے سے کہا جائے گا کہ قرآن پڑھتے جاؤ اور بہشت کے درجوں پر چڑھتے جاؤ اور چڑھتے جاؤ اور ایسے ٹھہر ٹھہر کر پڑھو جیسے دنیا میں ٹھہر ٹھہر کر پڑھا کرتے تھے تمہارا مقام وہیں جہاں آخری آیت پر پہنچو 
اس تیسرے نمبر یعنی علم و  ذکر کی دوسروں کو ترغیب دی جائے ان کے فضائل سنائے جائیں خود بھی اہتمام کریں دعا کی قوت کو بھی بڑھائیں اور دعا سے مسئلے حل کرائے جائیں دعائیں مانگی جائیں کہ اے اللہ مجھے علم وذکر کی حقیقت نصیب فرما 

مولانا خلیل الرحمن سجاد نعمانی کا پیغام Khalil ur Rahman Sajjad Nomani


 مولانا خلیل الرحمن سجاد . نعمانی دامت برکاتہم  کا پیغام 
تمام اساتذہ مدارس کے نام.
                             
آج اتنا فرق پڑ گیا مادیت کے غلبہ کا کہ ہم اساتذہ اپنے طلبہ کووہ تقوی نہیں دے پاتے،ان کے اندر ایک طلب صحیح کو منتقل نہیں کر پاتے ،اس وجہ سے اتنی محنت اور اتنا سرمایہ لگنے کے باوجود پہلے جیسے علما ءتیار نہیں ہو پا رہے،تو ایک تویہ بھی گزارش ہے کہ اپنی زندگی کے اس خلا کو بھی پر کریں ،طلبہ پر اساتذہ کی باطنی کیفیت کا بہت زیادہ اثر پڑتا ہے ،ہم ہزار نصیحتیں کریں تقریریں کریں،قانون بنائیں، طلبہ پر اس کا اتنا اثر نہیں پڑتا جتنا ہمارے اندر کی سوزش کا،تپش کااثر ہوتا ہے ،اس لئے اس جانب توجہ بہت ضروری ہے ،اس رواج کو زندہ کیجئے ،اس شعبہ کو زندہ کیجئے ،یہی آواز اس درودیوار سے آ رہی ہے ،یہاں کی تو یہی پکار ہے۔ 

دوسری بات یہ کہ بہت شدید محنت کے ساتھ پڑھائیے،استاذ کو طالب علم سے زیادہ محنت کرنی پڑتی ہے ،تب وہ صحیح طور پر تدریس کا حق ادا کر پاتا ہے ،ہمارے یہاں اس دور میں اس کا رواج بھی بہت کم ہو گیا ،آپ صرف پڑھائیں،نحوپڑھائیں ،بلاغت پڑھائیں،ادب پڑھائیں ،آپ انشا پڑھائیں ،آپ جو مضمون چاہیں پڑھائیں لیکن بچوں کو گھول کر پلا دیں ،بہت تیار ہو کر آئیں ،از خود محنت کریں،بہت سے لوگ جنہوں نے طالب علمی کے زمانہ میں بہت شدید محنت نہیں کی اور قسمت ان کو مدرس بنا دیتی ہے تو وہ بھی مایوس نہ ہوں، بلکہ دوران تدریس وہ اس کمی کی تلافی کرلیں ،کیونکہ ہم کو اس وقت بہت ذی استعداد علما ءکی ضرورت ہے،چند طلبا تو ایسے نکلیں مدرسوں سے جو بہت ممتاز عالم کہے جائیں،سب تو نہیں بنیں گے،جتنا بھی ہوکافی ہے،ہمیں تو مساجد کے ائمہ کی ضرورت ہے گبھرائے نہ ،ہمیں تو گاؤں گاؤں ارتداد سے بچانے کے ہیں،ایسے لوگ بھی تو بے کار نہیں ہیں ، ہمیں تو  ناظرہ پڑھانے والوں کی بھی ضرورت ہے،بہت بڑی خدمت انجام دے رہا ہے مدرسہ اگر ایسےلوگ نکال لے ،یہ بھی کوئی معمولی کام نہیں ہے،اور ان پر خاص نظر رکھی جائے کہ یہ جو بچہ ہے اس میں بہت خصوصیات ہیں، اس کو کہاں بھیجا جائے ،اس کوکیسےپڑھایاجائے  ،لیکن دو چار ذہین طلبہ بھی ہوتے ہیں جن کے اندر اچھی استعداد ہوتی ہے ،ایک اچھا جوہر ہوتا ہے تو پھر ان کو تو اس لائق بنایا جائے ،تو الگ سے کچھ نہ کچھ ضرور آپس میں صلاح مشورہ  ہو اور خصوصی توجہ ایسے بچوں پر دیں ،کیونکہ جتنی تعداد میں اچھے علما ءکی ،ممتاز علماء کی امت کو ضرورت ہے اس دور میں نہیں مل پا رہے ہیں،جس زمانہ میں بہت بڑے علماء تیار ہوئے اس زمانہ میں اساتذہ بہت محنت کرنے والے ہوتے تھے،وہ صرف ملازمت نہیں کرتے تھے ،ان کو تو اندر سے ایک عجیب قسم کی لگن تھی،جنون تھا ،میرے ایک استاذ تھے حضرت مولانا نور الحسن قاسمی صاحب ندوہ میں وہ حضرت مولانا اعجاز علی صاحب کے شاگرد خاص تھے ،وہ سناتے تھے کہ میں نےحضرت مولانا اعجاز علی صاحب کی بڑی خوشامد کی کہ مجھے فلاں کتاب خارج میں پڑھا دیجئے ،تو انہوں نے فرمایا کہ دیکھو میرے سارے اوقات بالکل پر ہیں،بس اتنا ہو سکتا ہے کہ ڈھائی بجے میں تہجد کے لئے اٹھتا ہوں ،تم دو بجے آجاؤ،میں دو بجے اٹھ جاؤں گا،میں دو سے ڈھائی کے بیچ میں تمہیں پڑھا لوں گا پھر میں اپنے معمولات پورے کر لوں گا ،تو وہ کہتے تھے کہ جب میں دو بجے وہاں پہنچا تو پچیس طلبہ وہاں منتظر تھے ، معلوم ہوا کہ میں اکیلا نہیں ہوں ،عجیب کیفیت تھی ،آج اگر ہم سے کوئی درجہ کے باہر سوال کرتا ہےتو ہم ناراض ہو جاتے ہیں ،یہ سب سکول ،کالج کے ٹیچروں کو زیب دیتا ہے ،جو صرف تنخواہ کے لئے کام کرتے ہوں ،اللہ کے لئے کام کرنے والے کو تو ہر وقت ایسی کیفیت میں ہونا چاہئے کہ ان کو صرف ایک ہی لگن ہو کہ بس میں ان طلبہکوکچھ بنادوں ،جیسے ماں بچہ کو دودھ پلانے کے لئے ہر وقت بے چین رہتی ہے ،ان کی یہ نیت ہو کہ وہ میرے لئے ذخیرہ آخرت بنیں گے ،ہمارے محی السنۃ حضرت مولانا شاہ ابرار الحق صاحب فرمایا کرتے تھے کہ اگر مدرس حضرات اخلاص اور درد دل کے ساتھ صرف تدریس کی ذمداری ادا کریں اور وہ پڑھانے کے لئے جاتے وقت تصحیح نیت کر لیں ،تجدیدِ نیت کر لیں ،صرف اتنا کر لیں اور کوئی خیانت نہ کریں ،مدرسہ کے اوقات میں ،مدرسہ کے اموال میں بہت ایمان داری کے ساتھ اپنا فرض ادا کریں ،مدرسین کے لئے ولایت کے حصول کے لئے اتنا ہی کافی ہے ،اسی لئے محی السنۃ حضرت مولانا شاہ ابرار الحق صاحب مدرسین کو بہت زیادہ اذکار ووظائف نہیں بتاتے تھے ،وہ کہتے تھے کہ آپ کا سلوک یہ ہے کہ آپ جب صبح پڑھانے کے لئے نکلیں تو پہلے اللہ سے دعا مانگ لیں کہ اللہ مجھے اخلاص کے ساتھ پڑھانے کی توفیق دے ،آپ کی رضا کے لئے میں پڑھانے جا رہا ہوں میری مدد فرما ،میری نیت درست رکھ ،اور دن میں بار بار ان نیتوں کی تجدید کریں اور بہت محنت سے پڑھائیں، یکسو ہو کر پڑھائیں، انشاءاللہ اخلاص کی وجہ سے یہی عمل آپ کا سلوک بن جائے گا .

Maulana Qasim Quraishi Banglore passed away Intaqal

Bade Ranj o Gham ke saath yeh Ittala di ja rahi hai ki 

MOULANA QASIM QURESHI SAHAB (Banglore)
 KA AAJ (23/07/2016) ASAR KI NAMAZ K BAAD
INTEQAAL HOGAYA HAI 
. _inna lillahi wa inna ilaahi razioon_

 بڑے ہی رنج وغم کے ساتھ یہ اطلاع دی جاتی ہے کہ شہربنگلور کرناٹک  کے معروف عالم دین حضرت مولانا قاسم قریشی صاحب کا بعد عصر انتقال ہو گیا ہے


إِنَّا لِلّهِ وَإِنَّـا إِلَيْهِ رَاجِعونَ 

INNA LILLAHI WA INNA LILLAHI RAJEOON.............

داعئی کبیرحضرت مولانا قاسم قریشی صاحب ؒ جن کے وجود سے دعوت وتبلیغ میں جان پڑی اور کام کرنے والوں میں حقیقی جذبات پیداہوئے، جان، مال، وقت، لگانے کا اصل مفہوم آپکی زندگی سے سمجھ میں آیا، آپ کی ذات فنافی التبلیغ تھی، مرتے مرتے کرنا ہے، اور کرتے کرتے مرنا ہے کا آپ مصداق تھے، آپ کا وجود حلقۂ دعوت وتبلیغ میں خیرکا باعث تھا، آپ نے اپنی زندگی میں دعوت و تبلیغ کے لئے بہت دکھ اور تکلیف اٹھائے ہیں، ، آپکی تقریر واقعتاً انقلاب آفریں ہوتی تھی، جس سے ہزاروں کی زندگیاں بدلی ہیں، اللہ آپ کوجزائے خیرعطاءفرمائے، جنت الفردوس 
میں اعلی مقام عطاء فرمائے،
************************************************************************
میں بھی موجود تھا وہان
از : ع ز قاسمی

بزرگ عالم دین دعوت وتبلیغ کے امیر براے کرناٹک حضرت مولاناقاسم قریشی صاحب کی نماز جنازہ تیار تھی .سلطان شاہ کا اندرونی حصہ صوبہ اور بیرن صوبہ سے آے ہوے عقیدت مندوں کے جم غفیر سے کھچا کھچ بھرا تھا 
مین سلطان شاہ کے عقب مین واقع چھوٹے میدان مین تھا جہاں نماز جنازہ کے لیے صف بندی ہو رہی تھی
یہاں بھی تاحد نظر انسانوں کا ایک ٹھاٹے مارتا ہوا سمندر دکھائ دے رہا تھا  
مائک سے ایک بزرگ کچھ بیان فرما رہے تھے 
میرا خیال تھا کہ شاید وہ مولانا کی حیات و خدمات اور ان کے کار ناموں پر روشنی ڈال رہے ہوں گے 
دور دراز سے آے ہوے عقیدت مند جن کی آنکھین اپنے ایک عظیم قائد کے بچھڑ جانے سے اشک بار تھین ان کی اشک شوئ کر رہے ہوں گے 
ان کو دلاسہ دے رہے ہوں گے

مین نے کان لگاے تو مائک سے بلند ہونے والی صدائین کچھ اور کہ رہی تھین

لوگوں سے مطالبہ کیا جا رہا تھا کہ آپ اپنی حیات مستعار کو خدا کے لیے وقف کردین 
چالیس دن اور چار مہینے کی تشکیل ہو رہی تھی 
لوگوں کو دعوت و تبلیغ کی اہمیت کو سمجھایا جارہا تھا 
گویا دعوت وتبلیغ کے مشن کو ایک لمحے کے لیے بھی فراموش نہیں کیا گیا تھا 
ایک دھن سوار تھی 
باھر کھڑے لوگ اشک بہا رہے تھے اور اندر کے حضرات سکون واطمنان کے ساتھ دعوت وتبلیغ سے متعلق سر گرمیوں مین مشغول تھے

مین کھڑا ہوا سوچ رہا تھا کہ دعوت وتبلیغ کی شاید انہی خوبیوں کی وجہ سے الله نے اس جماعت کو وہ مقام بخشا ہے کہ دنیا کا کوئ کونہ ایسا باقی نہیں ہے جہاں اس محنت سے لوگ نہ جڑے ہوں 
بس ایک جنوں ہے
ایک دیونگی ہے 
کہ لوگ ایک خدا سے روشناس کیسے ہو جائین
اور سرور کائنات حضور اقدس صلی الله علیہ وسلم کی سنتوں پر عمل پیرا کیسے ہو جائین
دعوت وتبلیغ سے جڑے لوگوں مین جب تک یہ جنوں باقی ہے دنیا کی کوئ طاقت ان کا بال بانکا نہین کر سکتی      
       مفتی عیسی زاھد قاسمی




May Allah SWT forgive him, grant him the highest rank in Jannah give sabr to his family members. And Allah give us Best replacement (bahtareen Naemul badal ).

The journey of a Muslim believer (soul) after death 

Everyone has to die one day. Allah says in the Quran:
 
كُلُّ نَفْسٍ ذَائِقَةُ الْمَوْتِ وَنَبْلُوكُمْ بِالشَّرِّ وَالْخَيْرِ فِتْنَةً وَإِلَيْنَا تُرْجَعُونَ (الأنبياء: 35
 

“Everyone is going to taste death, and We shall make a trial of you with evil and with good, and to Us you will be returned.” Quran (Surah Al-Anbiya:21)
However, the return of every soul to the afterlife shall depend on its state of righteousness in this world. To the pious believers, it will be said (as stated in the Quran):

يَا أَيَّتُهَا النَّفْسُ الْمُطْمَئِنَّةُ (الفجر: 27).
ارْجِعِي إِلَى رَبِّكِ رَاضِيَةً مَرْضِيَّةً (الفجر: 28).
فَادْخُلِي فِي عِبَادِي (الفجر: 29).
وَادْخُلِي جَنَّتِي (الفجر: 30). 
 

27. (It will be said to the pious): “O (you) the one in (complete) rest and satisfaction!.
28. “Come back to your Lord well-pleased (yourself) and well-pleasing (unto Him)!.
29. “Enter you then among My (honored) slaves,.
30. “And enter you My Paradise!”


Maut-ul-Alim, Maut-ul-Alam (Death of a scholar is a loss to the whole Universe)


He talk used to be Full of Akhlaqiat , manner, etiquette, Maashrat and remeberance of Akhirah (life after death) the eternal life after death.

May Allah SWT give him place in Janat-ul-firdaus (amin)..

حضرت حاجی عبد الوہاب صاحب Haji Abdul Wahab

 حاجیمحمد عبد الوہاب 
 ہمارے اندازہ میں ایسی شخصیت پوری دنیا میں کم ہوگی
کہ جس کا سوائے اللہ کے؛
کوئی آگے ہو نہ پیچھے، اور جس نے دین کے لیے سب کچھ چھوڑدیا ہو،
جس کی سوچ و بچار اور خیالات و فکر کا محور اور دائرہ؛ اُمت کی اصلاح و فکر ہو،
حاجی محمد عبد الوہاب ۱۹۲۳ء؁ کو دہلی ہندوستان میں پیدا ہوئے۔ اِبتدائی دِینی و عصری تعلیم حاصل کر کے اِسلامیہ کالج لاہور میں داخل ہوئے اور وہاں عصری علوم کی تکمیل کر کے تحصیل دار کے عہدے پر فائز ہوئے۔ 
 مولانا محمد الیاس کاندھلویؒ کی حیات ہی میں تبلیغی کام سے منسلک ہوکر فنا فی التبلیغ ہوگئے، یہاں تک کہ نوکری بھی چھوڑدی، اولاد کوئی تھی نہیں، اہلیہ کا کچھ عرصہ کے بعد اِنتقال ہوگیا، حق تعالیٰ نے ہر طرف سے آپ کو تبلیغ کے لیے عافیت عطا فرمادی، یوں آپ نے اپنے کو تبلیغ کے لیے وقف کردیا۔ ا۔
بیعت کا تعلق حضرت مولانا عبد القادر رائے پوریؒ سے قائم کیا اور خلافت سے سرفراز ہوئے اور ایک قول کے مطابق حضرت مولانا احمد علی لاہوریؒ سے بھی خلافت حاصل ہوئی۔ یوں اس وقت آپ ہر دو مشائخ کے آخری خلیفہ ہیں۔ آپ کی قریب قریب ایک صدی پر محیط پوری زندگی دعوت و عزیمت سے عبارت ہے، آپ نے مروجہ طریق پر درس نظامی کی کتب نہیں پڑھی ہیں چنانچہ آپ باقاعدہ عالم نہیں کہلاتے لیکن جب مجمع عام میں بیان کرنے کے لیے بیٹھتے ہیں تو محسوس ہوتا ہے کہ حق تعالیٰ نے آپ کو علم لدنی عطا فرمایا ہے۔
حضرت حاجی محمد عبد الوہاب صاحب اور ان جیسے دوسرے حضرات نے اس راہِ وفا میں جو تکلیفیں اُٹھائی ہیں اور جو تنگی و ترشی برداشت کی ہے اور جن مصائب و مشکلات سے گزرے ہیں، ہم جیسا اس کا تصوّر بھی نہیں کرسکتا، اللہ کے دین کے لیے پورا پورا دن بھوکا پیاسا پیدل چل چل کر ایک جگہ سے دوسری جگہ جانا اور لوگوں کی باتیں، گالیاں سن کر ماریں کھاکر دین کی محنت ان پر کرنا ان کے لیے معمولی بات تھی۔ حق تعالیٰ ان کو اپنی شایانِ شان بدلہ عطا فرمائے۔

Shura Tablighi Jamaat Markaz Nizamuddin Raiwind Kakarayel India Pakistan Bangladesh


                  حضرت اقدس مولانا طلحہ صاحب دامت برکاتہم کی درد بھری صدا

الله جل جلاله تمام اہل الله علماء ربانی اور اہل حق کو حضرت اقدس مولانا طلحہ صاحب دامت برکاتہم کی درد بھری صدا پر لبیک کہنے اور اپنی ذمہ داری کو پورا کرنے کے لیے جان کھپانے والی کوشش اور جدو جہد کرنے کی توفیق عطا فرمائے اور الله انکا حامی وناصر ہو ۔ ہم سب دعاؤں ، صدقہ ، اور آپس کی اجتماعیت اور محبت سے ان حضرات اہل حق کی مدد ونصرت کریں ۔
یہ کام پورے دین کو اور سارے دین کے شعبوں کو ذندہ کرنے کی ایک تحریک ہے جو الله پاک کا ایک عجیب وغریب اور خاص عطیہ ہے (لیکن بذات خود نہ یہ کامل دین ہے نہ کامل دین کی واحد محنت البتہ کامل دین اور کامل دین کی محنت کو ذندہ کرنے کی ایک تحریک ہے ۔ جیسا کہ حضرت مولانا الیاس نور الله مرقدہ نے فرمایا کہ ہماری چلت پھرت الف با تا ہے ، تقریباً مفہوم ۔ اور یہ بھی  فرمایا کے اس محنت سے ہزاروں خانقاہیں اور مدارس وجود میں آئینگے ) انتہائ عظیم نعمت ہے ۔  اہل باطل کا دیرینہ کھیل ہے اور سازشوں کا جال ہے ،
۔ اسکا علاج صرف یہ ہے جو حضرت مولانا طلحہ صاحب دامت برکاتہم العالیہ نے فرمایا ہے
۔ یہ امت کی امانت ہے ۔ یہ "تبلیغ جماعت " نہیں بلکہ ایک ہمہ گیر تحریک ہے ۔ الله ہم سبکو فہم سلیم عطا فرمائے اور واقعی اوّل اپنے لیے اور پھر درجہ بدرجہ امت کے تمام طبقات کے لیے آخرت کی فکر عطا فرمائے اور اور درد دل عطا فرمائے اور ہر مسلمان کی اسکے مرتبہ کے مطابق قدردانی کی توفیق عطا فرمائے اور  الله جل جلا له کی محبت کی بنیاد پر آپس میں محبت عطا فرمائے اور ہمارے پیارے محبوب نبی صلی علیہ وسلم کے درد و غم کی بنیاد پر اجتماعیت عطا فرمائے آمین آمین آمین آمین یا رب العالمین ۔

     مسلمانوں سے دردمندانہ اپیل    
  
     اجتماعیت میں خیر ،اللہ پاک کی مدد اور فتنوں سے حفاظت ہے ۔                          
مرکز نظام الدین کی اجتماعی شوری16ٰ نومبر 2015میں 5 اکابر کی بنی ہے ۔۔ 
        مولانا سعد صاحب دامت برکاتهم          
مولانا ابراھیم صاحب دامت برکاتهم
 مولانا احمد لاٹ صاحب دامت برکاتهم
مولانا یعقوب صاحب دامت برکاتهم
 مولانا زھیر الحسن صاحب دامت برکاته

   تمام مسلمانشوریٰ کو تعاون دیں یعنی انفرادی رائے سے بچتے ہوئے شوریٰ کے اجتماعی مشورہ سے یکسوں ہوکر اللہ کیلئے جان مال وقت کی قربانی کیساتھ دین کی محنت کریں اور اپنی ہدایت اور سارے انسانیت کی ہدایت کی فکر کریں

نومبر ۲۰۱۵ میں رائیونڈ کے اجتماع کے موقع پر حاجی عبد الوہاب صاحب کی بذرگوں کی اتفاق رائے سے توسیع کی ہو ئ شوری 


Mashware ka Urdu Typing



English Translation: 


Allah Rabbul Izzat had in this era,  , without any apparent resources, for revival of deen in the whole world, And in accordance of the way of the Prophet (saw) rekindled the striving for deen using Maulana Muhammed Ilyas  (rah). Laying its foundation with struggle and sacrifice. 
Before his passing away and upon his own insistence, through the unanimous decision by Mashwara of convergent Ulmae Haq thinkers of the time, selected Hazratji Maulana Yousuf sahab (rah) as the Zimmedar . 
who, on the lines of Maulana Ilyas sahab (rah) and in the light of Qur’an, blessed Hadith, Seerat Nabawi (saw) and the blessed lives of the noble Sahabah (radh), explained the motives and method of the work. Thus firmly holding the scales of balance, he presented forth the detailed roadmap of the work before the ummah. And the work spread throughout the world. 
Upon the passing away of Maulana Yousuf sahab (rah)Shaikh ul Hadeeth Hazrat Maulana Muhammed Zakariyya (rah) through the mashwara of convergent Ahle Haq Ulema thinkers, ceded the responsibility of this blessed work to Hazratji Maulana Inamul Hasan sahab (rah) 
He did a lot of work, preserved the Nahaj (manner) of tableegh. And to guard the real Nahaj of the work which was now spread to faraway lands, with the Mashwara of his near ones, made the arrangement of ‘shura’ in different countries. 
At some places, an Ameer was made along with the Shura and elsewhere made arrangement to select an arbiter (Faisal) by turns, from amongst the people of Mashwara. 
Thus to supervise the work & its progress spreading the entire nation, he constituted a shura of ten people around himself who under the supervision of Hazratji (rah) took all the working shura & individuals from everywhere under its wings. 
After the demise of Hazratji (rah) the ‘shura’ remained working on the same nahaj on which the previous three Akabir had taken course. 
On November 2015, Nizamuddin, Raiwind, Bangladesh and old workers/ zimmedars from different nations felt the need to complete the shura established by Hazratji (rah) of which eight people had passed away and only two remained. Such that the nahaj and methodology of this work was preserved. 

And whenever the need for any additions or corrections was observed, it could be executed through the complete unanimity of the shura, such that collectivity was maintained. And that no practice would be initiated either at Nizamuddin, Raiwind or Kakarayel without the approval of this shura. 

In the course of absence of any shura member (by demise), the shura then has to fill the void through the consensus of minimum two third of the shura. Such that the existence of shura is maintained. This blessed work belongs to the ummah and is a collective responsibility. 
After discussions and taking opinions from old workers of every place, this shura including the names of Hazrat Haji Abdul Wahhab sahab (db) and Hazrat Maulana Muhammed Saad sahab (db) has added the following names. Insha Allah this shura in future shall be comprised of 13 individuals. 
1. Hazrat Haji Abdul Wahhab sahab (db) 
2.Hazrat Maulana Muhammed Saad sahab (db)
3.Hazrat Maulana Ibrahim Dewla (db) (Nizamuddin) 
4. Hazrat Maulana Yaqoob saharanpuri (db) (Nizamuddin) 
5. Hazrat Maulana Ahmed Laat (db) (Nizamuddin) 
6. Hazrat Maulana Zuhairul Hasan (db) (Nizamuddin) 
7. Hazrat Maulana Nazrur Rahman (Raiwind) 
8. Hazrat Maulana Abdur Rahman (Raiwind) 
9. Hazrat Maulana ubaidullah Khurshid (db) (Raiwind) 
10. Hazrat Maulana Zia ul Haq (db) (Raiwind) 

11.Hazrat Qari Zubair sahab (db) (kakarayel) 

11. Hazrat Maulana Rabeul Haq (Kakarayel) 

12. Bhai Wasif ul Islam (kakarayel) 



The five shura members in this shura from Nizamuddin would constitute the Mashwara at Nizamuddin and this Shura shall oversee the general functioning of Nizamuddin through Mashwara. 
4th Safar 1437 / 16th November 2015 


Undersigned 
(Hazrat Haji) Muhammed Abdul Wahhab sahab (db) 
(Hazrat) Maulana Ahmed laat sahab (db) 
(Hazrat) Maulana Tariq jameel sahab (db) 
(Hazrat) Dr Sanaullah sahab (db) 
(Hazrat) Maulana Muhammed Yaqoob sahab (db)
(Hazrat) Maulana Muhammed Ihsan ul Haq sahab (db) 

(Hazrat) Bhai Farooq sahab (db) 

(Hazrat) Dr Roohullah sahab (db) 
(Hazrat) Bhai Chaudhry Muhammed Rafeeq sahab (db) 
(Hazrat) Maulana Nazrur Rahman sahab (db) 
(Hazrat) Dr Muhammed Khalid Siddiqui sahab (db) 

(Hazrat) Bhai Bakht Muneer sahab (db) 

(Hazrat) Professor Abdur Rahman sahab (db) 

(Hazrat) Maulana Ismail Godhra sahab (db)